PDA

View Full Version : Mirza Ghalib


  1. ~~@@ MIRZA GHALIB ~~@@ KALMKAR PERSONALITY PROJECT
  2. Darde afsoon nazar aaya
  3. Na tha kuch to kKHUDA tha
  4. har ik baat pe
  5. Ye na thi hamari kismat
  6. koi umeed bar nahn aati
  7. dil se nigah ......
  8. ghiste ghiste paon men.....
  9. milti hai kuay yaar se
  10. dehar men naqshe wafa...
  11. Kisi ko de k dil koi
  12. Dil hi to hai
  13. ye jo ham hijr mein diivaar-o-dar ko dekhate hain
  14. نقش فریادی ہےکس کی شوخئ تحریر کا
  15. جنوں گرم انتظار و نالہ بیتابی کمند آیا
  16. عالم جہاں بعرضِ بساطِ وجود تھا
  17. کہتے ہو نہ دیں گے ہم دل اگر پڑا پایا
  18. دل میرا سوز نہاں سے بے محابا جل گیا
  19. عشق سے طبیعت نے زیست کا مزا پایا
  20. شوق، ہر رنگ رقیبِ سروساماں نکلا
  21. دھمکی میں مر گیا، جو نہ بابِ نبرد تھا
  22. شمار سبحہ،" مرغوبِ بتِ مشکل" پسند آیا
  23. دہر میں نقشِ وفا وجہ تسلی نہ ہوا
  24. ستایش گر ہے زاہد ، اس قدر جس باغِ رضواں کا
  25. بس کہ ہوں غالبؔ ، اسیری میں بھی آتش ز یِر پا
  26. شوق، ہر رنگ رقیبِ سروساماں نکلا
  27. محرم نہیں ہے تو ہی نوا ہائے راز کا
  28. بزمِ شاہنشاه میں اشعار کا دفتر کھلا
  29. شب کہ ذوقِ گفتگو سے تیری دل بیتاب تھا
  30. نالۂ دل میں شب اندازِ اثر نایاب تھا
  31. کس کا جنونِ دید تمنّا شکار تھا؟
  32. پھر مجھے دیدہ تر یا د آیا
  33. بسکہ دشوار ہے ہر کام کا آساں ہونا
  34. دوست غمخواری میں میری سعی فرمائیں گے کیا
  35. یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصالِ یار ہوتا
  36. ہوس کو ہے نشاطِ کار کیا کیا
  37. درخورِ قہر و غضب جب کوئی ہم سا نہ ہوا
  38. پے نذرِ کرم تحفہ ہے 'شرمِ نا رسائی' کا
  39. گر نہ اندوهِ شبِ فرقت بیاں ہو جائے گا
  40. درد مِنّت کشِ دوا نہ ہوا
  41. گلہ ہے شوق کو دل میں بھی تنگئ جا کا
  42. قطرۀ مے بس کہ حیرت سے نف س پرور ہوا
  43. میں اور بزمِ مے سے یوں تشنہ کام آؤں
  44. جب بہ تقریبِ سفر یار نے محمل باندھا
  45. گھر ہمارا جو نہ روتے بھی تو ویراں ہوتا
  46. نہ تھا کچھ تو خدا تھا، کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوت&
  47. بنا کر فقیروں کو ہم بھیس غالبؔ
  48. یک ذرۀ زمیں نہیں بے کار باغ کا
  49. وه میری چینِ جبیں سے غمِ پنہاں سمجھا
  50. دل، جگر تشنۂ فریاد آیا
  51. دل ہی تو ہے،نہ سنگ و خیشت،درد دے
  52. ہوئی تاخیر تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا
  53. لبِ خشک در تشنگی، مردگاں کا
  54. تو دوست کسی کا بھی، ستمگر! نہ ہوا تھا
  55. آئینہ دیکھ، اپنا سا منہ لے کے ره گئے
  56. ضعفِ جنوں کو وقتِ تپش در بھی دور تھا
  57. فنا کو عشق ہے بے مقصداں حیرت پرستاراں
  58. عرضِ نیازِ عشق کے قابل نہیں رہا
  59. خود پرستی سے رہے باہم دِگر نا آشنا
  60. ذکر اس پری وش کا، اور پھر بیاں اپنا
  61. طاؤس در رکاب ہے ہر ذرّه آه کا
  62. غافل بہ وہمِ ناز خود آرا ہے ورنہ یاں
  63. جور سے باز آئے پر باز آئیں کیا
  64. بہارِ رنگِ خونِ دل ہے ساماں اشک باری کا
  65. عشرتِ قطره ہے دریا میں فنا ہو جانا
  66. شکوۀ یاراں غبارِ دل میں پنہاں کر دیا
  67. پھر وه سوۓ چمن آتا ہے خدا خیر کرے
  68. اسدؔ ! یہ عجز و بے سامانئِ فرعون توَام ہے
  69. گزرجائے گی زندگی اس کے بغیر بھی
  70. phir kuchh is dil ko beqaraarii hai
  71. ہزاروں خواہشیں ایسی کہ ہر خواہش پہ دم نکلے
  72. ہے غنیمت کہ بہ امید گزر جائے گی عمر
  73. Koi hamain sataye kyun ??
  74. عشق مجھ کو نہیں وحشت ہی سہی
  75. غير ليں محفل میں بو سے جام كے
  76. Mirza Ghalib (غالب
  77. دل پہ کرتے ہیں دماغوں پہ اثر کرتے ہیں
  78. اس کا یہ حال کہ کوئی نہ ادا سنج ملا
  79. {:~{: Na Huta Gar Juda ....
  80. Na tha kuch to Khuda tha,
  81. ہے غنیمت کہ بہ امید گزر جائے گی عمر
  82. دل ہی تو ہے نہ سنگ و خشت، درد سے بھر نہ
  83. *::* فقط ایک شعر میں اندازِ رسا رکھتے تھے *::*
  84. ~*~ ڈبويا مجھ کو ہونے نے ، نہ ہوتا ميں تو کيا ہو
  85. }{ جو مری کوتاہئ قسمت سے مژگاں ہو گئیں }{
  86. ~:~:~ Kabi din ne Aaghaz kia :~:~:~
  87. مدت ہوئی ہے یار کو مہماں کیے ہوئے
  88. :}Kis Waste Aziz Nai Jante Muje ....
  89. Jab Tak Na Lage Bewafaai Ki Thokar,
  90. aa.iina dekh apnaa saa mu.nh le ke rah ga.e
  91. آنکھ سے آنکھ ملاتا ہے کوئی
  92. ho ga.ii hai Gair kii shiirii.n-bayaanii kaargar