Urdu Planet Forum -Pakistani Urdu Novels and Books| Urdu Poetry | Urdu Courses | Pakistani Recipes Forum  

Go Back   Urdu Planet Forum -Pakistani Urdu Novels and Books| Urdu Poetry | Urdu Courses | Pakistani Recipes Forum > General Forum > News and Current Affairs

Notices

News and Current Affairs All kind of news and Current Affairs will goes here

Reply
 
Thread Tools Display Modes
Old 02-01-2012, 07:49 AM   #1
Rania
 
Rania's Avatar

Users Flag!
 
Join Date: Jan 2011
Posts: 12,669
Rania has a reputation beyond reputeRania has a reputation beyond reputeRania has a reputation beyond reputeRania has a reputation beyond reputeRania has a reputation beyond reputeRania has a reputation beyond reputeRania has a reputation beyond reputeRania has a reputation beyond reputeRania has a reputation beyond reputeRania has a reputation beyond reputeRania has a reputation beyond repute
Rose لاپتہ افراد کوعدالت میں پیش کیا جائے


عدالت کے علم میں یہ بات نہیں ہے کہ ان افراد کو صوبائی
حکومت کے حوالے کیا گیا ہے، چیف جسٹس

پاکستان کی سپریم کورٹ نے پاکستانی فوج کے خفیہ ادارے
آئی ایس آئی یعنی انٹرسروسز انٹیلیجنس اور ملٹری انٹیلیجنس
کو اڈیالہ جیل سے لاپتہ ہونے والے گیارہ افراد کو نو
فروری کو عدالت کے سامنے پیش کرنے کا حکم دیا ہے۔
ان اداروں کے وکیل کا کہنا ہے کہ ان میں سے چار افراد
پُراسرار بیماری کی وجہ سے ہلاک ہوگئے ہیں۔

  • چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے ان افراد سے متعلق دائر درخواست کی سماعت کی تو آئی ایس آئی اور ایم آئی کے وکیل راجہ ارشاد نے عدالت کو بتایا کہ سات افراد کو صوبہ خیبر پختون خوا کی حکومت کے حوالے کرد یا گیا ہے جبکہ چار افراد پراسرار بیماری کی وجہ سے پشاور کے ایک ہستپال میں ہلاک ہوئے ہیں۔


چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ عدالت کے علم میں یہ بات نہیں ہے کہ ان افراد کو صوبائی حکومت کے حوالے کیا گیا ہے۔
انہوں نے فوج کے خفیہ اداروں کی نمائندگی کرنے والے وکیل کو مخاطب کرتے ہوئے کہا ’ آپ ہی ان افراد کو لیکر گئے تھے اور آپ ہی ان افراد کو عدالت کے سامنے پیش کریں‘۔
خفیہ ایجنسیوں کے وکیل کا کہنا تھا کہ انہیں ایک روز قبل ہی وکیل مقرر کیا گیا ہے لہذا انہیں جواب دینے کے لیے وقت دیا جائے۔
نامہ نگار شہزاد ملک نے بتایا کہ راجہ ارشاد کا کہنا تھا کہ ان گیارہ میں سے چار افراد پراسرار بیماری کی وجہ سے ہلاک ہوئے جبکہ چار افراد شدید بیمار ہونے کی وجہ سے پشاور کے لیڈی ریڈنگ ہسپتال میں زیر علاج ہیں اور باقی تین افراد پاراچنار میں واقع ایک تفتیشی مرکز پر ہیں جہاں پر اُن سے تفتیش جاری ہے۔
<B>یاد رہے کہ سنہ دوہزار نو میں راولپنڈی کی انسدادِ دہشت گردی کی عدالتوں نے مختلف مقدمات میں گرفتار ہونے والے گیارہ افراد کو عدم ثبوت کی بناء پر بری کر دیا تھا تاہم اطلاعات کے مطابق اڈیالہ جیل سے رہائی کے فوری بعد ان افراد کو خفیہ ایجنسیوں کے اہلکار اپنے ساتھ لے گئے تھے۔
"سات افراد کو صوبہ خیبر پختون خوا کی حکومت کے حوالے کرد یا گیا ہے جبکہ چار افراد پراسرار بیاری کی وجہ سے پشاور کے ایک ہستپال میں ہلاک ہوئے ہیں۔"
</B>خفیہ اداروں کے وکیل راجہ ارشاد

اکتوبر سنہ دوہزار دس میں سپریم کورٹ کی مداخلت پر فوج کے وکیل راجہ ارشار نے عدالت کو بتایا تھا کہ یہ افراد ان کی تحویل میں ہیں کیونکہ یہ افراد فوجی تنصیبات پر حملوں میں ملوث ہیں۔
چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ آئین قانون سے بڑا ہوتا ہے کیونکہ آئین ہی لوگوں کے جان ومال کے تحفظ کی ضمانت دیتا ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ اگر وزیر اعظم عدالت میں پیش ہوسکتے ہیں تو دیگر اعلٰی عہدوں پر بیٹھے ہوئے افراد اس سے مُبرا نہیں ہیں۔
درخواست گزار طارق اسد کا کہنا تھا کہ خفیہ اداروں کے اہلکاروں نے چار افراد کو بھوکا رکھا اور انہیں تشدد کر کے ہلاک کیا لیکن کوئی اس کی ذمہ داری قبول نہیں کر رہا جس پر آئی ایس آئی کے وکیل راجہ ارشاد کا کہنا تھا کہ اس بیان میں کوئی حقیقت نہیں ہے۔
چیف جسٹس نے راجہ ارشاد کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ وہ آئندہ سماعت پر اس بات کی وضاحت کریں کہ چار افراد کس طرح ہلاک ہوئے۔
عدالت نے پشاور کے ہسپتال میں زیرِعلاج چار افراد کو ان کے رشتہ داروں سے ملنے کی اجازت دے دی۔
سماعت کے بعد سپریم کورٹ کے باہرمیڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے راجہ ارشاد نے کہا کہ وہ آئندہ سماعت پر عدالت کو بتائیں گے کہ ان افراد کے خلاف فوجی قوانین کے تحت کارروائی ہوئی ہے کہ نہیں۔
نے لاپتہ افراد کی بازیابی کے لیے وزارتِ داخلہ میں بنائے جانے والے کمیشن سے کہا ہے کہ وہ لال مسجد آپریشن کے دوران لاپتہ ہونے والے افراد کے معاملے کو بھی دیکھے۔
یہ بات جسٹس جاوید اقبال کی سربراہی میں سپریم کورٹ کی دو رکنی بینچ نے لاپتہ افراد سے متعلق درخواستوں کی سماعت کے دوران کہی۔
اس واقعہ سے متعلق اس قسم کے احکامات پہلے نہیں دیے گئے تھے۔
سرکاری اعداد و شمار کے مطابق اس واقعہ میں ایک سو کے قریب افراد ہلاک ہوئے تھے اور اُس وقت کے فوجی حکمراں جنرل پرویز مشرف کی حکومت کا کہنا تھا کہ یہ تمام افراد شدت پسند تھے۔
نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق، اس آپریشن میں لاپتہ ہونے والے سینکڑوں افراد کے ورثاء کی جانب سے دائر کردہ درخواستیں سپریم کورٹ میں زیرِ التوا ہیں۔ ان میں چند خواتین کے بارے میں بھی درخواستیں ہیں تاہم اُس وقت کی فوجی حکومت کا کہنا تھا کہ اس آپریشن میں کوئی خاتون ہلاک نہیں ہوئی تھی۔
بیرونِ ملک قید پاکستانیوں کے معاملے پر عدالت نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ وہ افسران جو بیرونِ ملک تعینات ہیں مغل بادشاہوں کا کردار ادا نہ کریں بلکہ مصیبت زدہ پاکستانیوں کی رہائی کے لیے مناسب اقدامات کریں۔



ایڈیشنل اٹارنی جنرل کے کے آغا نے وزارتِ داخلہ کے کمیشن کی مرتب کردہ ایک رپورٹ عدالت میں پیش کی جس میں کہا گیا ہے کہ کمیشن نے مزید گیارہ افراد کا سراغ لگا لیا ہے جن میں غلام مصطفی، عبدالحفیظ، حبیب الرحمان، محمد زبیر، محمد یعقوب، حافظ آصف رضا، محموالحسن، مولانا غلام الدین، اور عثمان گل شامل ہیں۔
تاہم رپورٹ میں یہ ذکر نہیں تھا کہ آیا وہ خفیہ ایجنسیوں کی تحویل میں تھے یا نہیں۔
رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ پندرہ مارچ تک کمیشن نے ایک سو آٹھ کیسز نمٹائے جن میں سے تراسی کا سراغ لگایا گیا ہے۔ دو سو اٹھائیس کیسز زیرِ التوا ہیں، بیس افراد کے مقدمات درج کیے گئے ہیں جبکہ پانچ سے متعلق ان کی گمشدگی کے شواہد نہیں ملے۔
رپورٹ کے مطابق، کمیشن میں مجموعی طور پر تین سو چھتیس لاپتہ افراد کے کیسز سامنے آئے ہیں۔
بیرونِ ملک قید پاکستانیوں کے معاملے پر عدالت نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ وہ افسران جو بیرونِ ملک تعینات ہیں مغل بادشاہوں کا کردار ادا نہ کریں بلکہ مصیبت زدہ پاکستانیوں کی رہائی کے لیے مناسب اقدامات کریں۔
عدالت نے کہا کہ اگر اس معاملے میں کوئی پیش رفت نہ ہوئی تو عدالت متعلقہ افسران اور سفیروں کو بھی عدالت طلب کر سکتی ہے۔
بعد ازاں عدالت نے کاروائی کی سماعت دو ہفتوں کے لیے ملتوی کردی۔
اس مقدمہ کی گزشتہ سماعت بند کمرے میں ہوئی تھی جس کے دوران سکریٹری دفاع اور داخلہ عدالت میں پیش ہوئے تھے۔ اس سماعت کی کارروائی جسٹس جاوید اقبال کے چیمبر میں ہوئی تھی۔

Last edited by Rania; 02-01-2012 at 07:52 AM.
Rania is offline   Reply With Quote
Reply

Bookmarks

Tags
لاپتہ, افراد, جائے, میں, پیش, کوعدالت, کیا


Currently Active Users Viewing This Thread: 1 (0 members and 1 guests)
 
Thread Tools
Display Modes

Posting Rules
You may not post new threads
You may not post replies
You may not post attachments
You may not edit your posts

BB code is On
Smilies are On
[IMG] code is On
HTML code is Off

Forum Jump

Similar Threads
Thread Thread Starter Forum Replies Last Post
ماں کیا کہتی ہے مجھ سے Night Jasmine Urdu Adab 7 06-13-2013 08:57 PM
}<}<}لاہور پاکستان کا اور ہمارا دل {>{>{ Rania Pakistan Planet 6 01-04-2013 04:23 PM
راشد منہاس Princess Of Azkaban Pakistan Planet 6 12-24-2012 12:17 AM
ّّ(مائیں کیا کر رہی ہیں) Princess Of Azkaban Short Urdu Stories/Afsaany 2 01-24-2012 12:16 AM
~::~ سگریٹ کم ہوں یا زیادہ، موت ~::~ Rania Health and Fitness 5 01-18-2012 12:12 PM


All times are GMT +6. The time now is 12:50 AM.


Powered by vBulletin® Version 3.8.9
Copyright ©2000 - 2021, vBulletin Solutions, Inc.